M. Hameed Shahid
Home / محمد حمید شاہد|کوائف

محمد حمید شاہد|کوائف

Muhammad Hameed Shahid

ENGLISH|||||||||||||||||||||||||||||||||||||||||||||||||

11222669_850888101667201_1549727880003157737_o

محمد حمید شاہد 23 مارچ 1957 کو  پنڈی گھیب ضلع اٹک، پنجاب، پاکستان میں پیدا ہوئے۔ ان کے والد غلام محمد سماجی اور سیاسی کارکن تھے اور گھر میں کتب خانہ بنا رکھا تھا جس نے محمد حمید شاہد کو مطالعہ کے طرف راغب کیا۔ آپ کے دادا حافظ غلام نبی 1947 میں اپنے آبائی گائوں چکی کو خیرباد کہہ کر پنڈی گھیب میں بس گئے تھے ۔ آپ نسبی طور پر اعوان، اجمال ہیں۔

تعلیمی سلسلہ

محمد حمید شاہد نے ابتدائی تعلیم پنڈی گھیب سے پائی۔ میٹرک کے بعد زرعی یونیورسٹی فیصل آباد میں داخلہ لے لیا اور بہ قول سید ضمیر جعفری وہاں سے بستانیت کے فاضل ہوئے۔ بعد ازاں قانون کے تعلیم کے لیے پنجاب یونیورسٹی لاہور میں داخل ہو گئے۔ مگر والد ماجد کی شدید علالت اور بعد میں موت کے ساتھ ہی یہ سلسلہ منقطع ہو گیا اور ایک بنکار کی حیثیت سے عملی زندگی کا آغاز کر دیا۔

 ادب

محمد حمید شاہد کی ادبی زندگی کا آغاز یونیورسٹی کے زمانے ہی سے شروع ہو چکا تھا۔آپ یونیورسٹی کے مجلہ “ کشت نو“ کے مدیر رہے۔ آپ کے پہلی کتاب اسی زمانے میں لاہور سے شائع ہوئی ۔ پہلے پہلے انشائے بھی لکھے مگر جلد ہی افسانہ نگاری کی طرف آ گئے۔ “بند آنکھوں سے پرے“ کی اشاعت کے بعد اردو دنیا کی توجہ پا لی۔ آپ کے افسانوں کے مجموعوں “جنم جہنم“ اور “مرگ زار“ کے بعد آپ کا شمار اسی کی دہائی کے نمایاں ترین افسانہ نگاروں میں ہونے لگا۔ محمد حمید شاہد کے ناول “ مٹی آدم کھاتی ہے“ اور اردو افسانوں “ سورگ میں سور“،“ مرگ زار“ اور “ برف کا گھونسلا “ کو بہت نمایاں مقام دیا جاتا ہے۔

حکومت پاکستان نے محمد حمید شاہد کی ادبی خدمات کے اعتراف میں ان کے لیے صدارتی سول ایوارڈ “نمغہ امتیاز” کا اعلان پاکستان کے قومی دن 14 اگست 2016 کو کیا ، جو صدر اسلامی جمہوریہ پاکستان نے23 مارچ 2017 کو ایوان صدر میں منعقد ہونے والی ایک تقریب میں دیا۔

چند معروف تصانیف

افسانے           

بند آنکھوں سے پرے

جنم جہنم

مرگ زار

آدمی

پارو

محمد حمید شاہد کےپچاس افسانے

دہشت میں محبت

                                 ناول             

مٹی آدم کھاتی ہے 

 تنقید             

ادبی تنازعات

اشفاق احمد : شخصیت و فن

اردو افسانہ : صورت و معنی

کہانی اور یوسا سے معاملہ

راشد میراجی فیض:نایاب ہیں ہم

سعادت حسن منٹو:جادوئی حقیقت نگاری اورآج کا افسانہ

اردو فکشن:نئے مباحث

دیگر             

پیکر جمیل

لمحوں کا لمس

الف سے اٹکھیلیاں

سمندر اور سمندر

مفصل کوائف          

محمد کامران شہزاد کے ایم فل کے تحقیقی مقالہ محمد حمید شاہد کی ادبی خدمات سے مقتبس سوانحی حالات

 

 

 

 

 

 

 

 

amna
آمنہ یونس کے ایم فل کے تحقیقی مقالہ محمد حمید شاہد کی ادبی خدمات سے مقتبس سوانحی حالات

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *