M. Hameed Shahid
Home / تنقید نو / موت اور زندگی کے جھٹپٹے میں:اسد محمد خاں کے افسانے

موت اور زندگی کے جھٹپٹے میں:اسد محمد خاں کے افسانے

اسد محمد خاں
فکشن میرے عہد کا:محمد حمید شاہد

’’ٹکڑوں میں کہی گئی کہانی ‘‘کے ساتویں حصے (۱)میں اسد محمد خاں نے ، جو ٹکڑے جوڑے ہیں ان میں اپنے بھتیجے/ بھائی ناصر کمال کو بھیجی گئی ای میلز بھی ہیں ۔ ناصر کو بھیجی گئی ایک ای میل میں پس نوشت کا اضافہ ملتا ہے جس میں ہمارے افسانہ نگار نے اپنے آنے والے ناول سے اقتباس دینے سے پہلے اپنا نام ، اسد محمد خاں نہیں،اسد بھائی خانوں لکھا ہے۔ناول کا یہی اقتباس’’خانوں ‘‘(۲)کے عنوان سے ’’تیسرے پہر کی کہانیاں‘‘ کا حصہ بھی ہو گیا ہے ۔ اس خانوں کے اندر ایک ندی بہتی ہے ۔ ایسی ندی جو معدوم ہوکر بھی اس کے اندر بہتی رہتی ہے اور بہتی ر ہے گی ۔ اس لیے کہ اسد بھائی خانوں جان گیا ہے:
’’چیزوں پر موت کا اور decay کا ورود کس طرح ہوتا ہے‘‘(۳)
موت کی معرفت پانے والے کا کمال یہ بھی ہے کہ وہ معدوم ہو چکی ندی کوگزرے برسوں کے اندر گھس کر ری کریٹ کر لیتا ہے ۔ اس کے پاس گزرے وقتوں کے نقوش سلامت ہیں۔ دھندے، مگر خواب صورت ۔ وہ انہیں خوب صورت کہتا ہے ، کہ یہ ویسے ہی ہیں جیسے کہ وہ تھے ۔ وہ انہیں ٹکڑے ٹکڑے جوڑ کر دکھاتا ہے اور چاہے توحیلہ کرکے اپنے اندر بہتی ندی کو حال میں لاکر ناموجود میں بدل دیتا ہے ۔ پاترا ندی کی سی گاڑھے کیچڑ میں بدلتی یا زخم سے رستے سست روpuss کی لکیر جیسی ۔ کیوں کہ وہ جانتا ہے کہ ’’چیزوں پر موت کا اور decay کا ورود کس طرح ہوتا ہے‘‘۔ سو اس کی کہانیاں اسی اجلی ندی کی طرح بہتی یا پھر موت کے چرکے سہنے اور ڈی کے ہو کر معدوم ہونے کی کہانیاں ہیں ۔
صاحب یہیں یہ بات سمجھنے اور پلو میں باندھنے کی ہے کہ زندگی اور موت کے اور طرح کے کھیل سے متشکل ہونے والا اور طرح کا ایسا بیانیہ جو پڑھنے والوں کے لہو میں سرایت کر جاتا ہے ، عجب منظروں اور ذرا مشکل سے کرداروں سے بنا ہے ۔ میں نے مشکل کرداروں کی بات کی تو اس باب میں مجھے سب سے پہلے جس کردار کو گنوانا ہے وہ تو خود افسانہ نگار کا ہے ۔ وہی جسے اس نے ’’خانوں‘‘ کہا اور کہیں ’’الف میم خے‘‘ ۔ اور جس کے کٹمب قبیلے کامئی دادا کی اصطلاح میں ’’ایساچاروں کھونٹ ساکھ سجر‘‘ ہے کہ کسی نے کہیں دیکھا نہ سنا ۔اس ساکھ سجر کو بھی فکشن بنا لیا گیا ہے ۔ میں جو بار بار ’’ساکھ سجر‘‘ کہہ رہا ہوں تو یوں ہے کہ افسانہ’’ مئی دادا‘‘ میں بتا دیا گیا ہے کہ یہ’’ شاخ شجرہ‘‘ (۴) ہے ،شجرہ نسب کے معنی میں ۔ ’’ایساچاروں کھونٹ ساکھ سجر‘‘ کیا ہوتا ہے میں افسانہ نگار کا شجرہ پڑھ دیتا ہوں، اندازہ آپ خود لگا لیجئے۔ (۵)
ماں ؛ منورجہاں بیگم ،وسط ہند کی پٹھان ریاست بھوپال میں غالب کے ایک شاگرد نواب یار محمد خان شوکت کے منجھلے صاحب زادے سلطان محمد خان سلطان کی بیٹی۔
دادا ؛ میاں کمال محمد خان ،اورک زئی، میرزائی خیل ، کسان جو پیر شریعت ہوگئے کہ نوجوانی میں جاگیر چھنوا بیٹھے تھے۔
والد؛ میاں عزت محمد خان ، مصوری کے استاد، جن کے بارے میں اپنے بچپن کے دوست ، کٹر ہندو ٹھاکر صاحب جگن پورہ کی تحریک پر دادا کا یہ کہنا تھا کہ بدعقیدہ لوگوں کی صحبت نے گمراہ کر دیا تھا ۔
گھرانہ؛ جس میں پینسٹھ کلرک ، چودہ والیان ریاست اور نواب، دو ڈکیت ، تین نیتا، گیارہ جرنیل ، ایک صاحب کرامت ولی ، ایک شہید، چھ ٹوڈی ، دو کامریڈ ، ایک اولمپئین ، سات مکینک، چونتیس تحصیلدار، ایک موذن ، ایک ڈپلو میٹ ، سات شاعر ، پانچ ناکے دار ، کچھ پولیس والے، بہت سے لیکچرر اور استاد، ایک تانگے والا، تیس چالیس جاگیردار اور پانچ سو نکمے پیدا ہوئے ۔
ان سب کے درمیان ہمارا افسانہ نگار پیدا ہوا۔ دادا کی بیاض کے اندراج کے مطابق ، ایک منحوس ساعت میں، انہی کے درمیان پلا بڑھا ، بھوپال سے چلا بمبئی پہنچا وہاں سے کراچی آکر بس گیا کمرشل آرٹسٹ بنا ، پبلشر ہوا، کلرکی کی ،اسسٹنٹ اسٹیشن ماسٹر ، ٹریول ایجنٹ ، انگریزی کا استاد ،ریڈیونیوز ریڈر۔ بہت سے کام کیے اور اس کا کہنا ہے کہ ڈھنگ سے کچھ نہ کیا مگر میں جو اس کا فکشن پڑھتا ہوں تو ماننا پڑتا ہے کہ ذرا الگ طرح کا اسلوب ڈھالنے کے لیے حیاتی کی بھٹی میں اس طرح تپنا اور پگھلنا پڑتا ہے ۔ یوں ہے صاحب کہ اس کی کہانیوں میں یہ جو ٹیڑھے کردار ہیں عام ڈگر سے ہٹے ہوئے۔۔۔ ’’باسودے کی مریم‘‘ (۶)کے ممدو اور اس کی ماں جیسے ۔۔۔ ’’مئی داد‘‘ (۷)کے مجیتے یا مجیدے جیسے۔۔۔۔’’ترلوچن ‘‘(۸)کا عین الحق،’’فورک لفٹ ۳۵۲حمود الرحمن کمیشن کے روبہ رو‘‘ (۹)کا پرماننٹ کلینر/ ڈرائیورعبدالرحیم،’’ ہے للاللا‘‘ (۱۰)کا اپنے وجدان میں آوازوں کو تراشنے اور اپنی sensitivity نہ چلتے دیکھ کر مر جانے والا استا د عاشق علی خان،’’ گھس بیٹھیا‘‘ (۱۱)کا ببریار خان جس کے بارے میں وثوق سے نہیں کہا جا سکتا تھا کہ اسے کلمہ شہادت صحیح طور پر یاد تھا یا نہیں ، مگر اس نے گردن کا منکا ڈھلنے سے پہلے طمانیت کے ساتھ کلمہ پڑھنے کی کوشش کی تھی اور اٹک گیا تھا،’’ گھڑی بھر کی رفاقت‘‘ (۱۲)کا عیسٰی خان ککبور سروانی ، جس نے ٹھنڈے غصے میں لرزتے ہوئے زین کا تسمہ کھول کر گھوڑے کا سازو یراق زمین پر گرایا اپنی نیام کو چوڑائی کے رخ جریب کی طرح گھوڑے کی پیٹھ پر مار ،بوجھ کھینچنے والے جانور کی طرح ہنکایا اور چیخ کر کہا تھا ’’تف ہے تجھ پر، تیری سواری نے مجھے عیسٰی خان نہ رہنے دیا او لعنتی جانور تیری نصف ساعت کی رفاقت نے مجھے چوہے جیسا خود غرض اور کمینہ بنادیا ۔ تف ہے تجھ پر‘‘ ۔ اپنے ہی شعلے کا شہید، اپنی جیکٹ میں فٹ کیا ہوا ،اپنی تربت میں جندہ دبا دیا گیا ’’دھماکے سے چلا ہوا آدمی‘‘(۱۳) یہ سب اور اس طرح کے بہت سارے کردار ہمارے اس افسانہ نگار کے اپنے لوگ ہیں ، اپنے پرکھوں کے دیکھے بھالے ، اپنی لکھی ہوئی تاریخ کے نسیان میں دھنسے ہوئے یا پھر اس کی اپنی ذات کی پرچھائیں سے برآمد ہو جانے والے ، اس کی آنکھوں میں کھبے ہوئے اوراس کی نفرتوں ، محبتوں اور غصے کے ڈھالے اور پالے ہوئے۔
جی، میں بے دھیانی یہاں غصے کا لفظ نہیں لکھ گیا ہوں۔ یوں ہے کہ اسد محمد خان کے بیانیے کی تشکیل میں یہ غصہ قوت متحرکہ کے طور پر کام کر رہا ہوتاہے اسی سے اس کا بیانیہ ایک گونج پیدا کرتا ہے اور پھر اس کی مسلسل سنائی دیے چلے جانے والی بازگشت بھی اسی قرینے کا اعجاز ہے۔غصے کے بارے میں اس کا ایک نقطہ نظر ہے ، جسے سمجھنے کے لیے اس کا افسانہ ’’غصے کی نئی فصل‘‘ (۱۴)کا مطالعہ بہت اہم ہو جاتا ہے۔ یہ غصہ اس کی کہانی کے بیانیے کا مزاج تو اول روز ہی سے بنا رہا تھا مگر کہانی میں اس کی تجسیم اس کے افسانوں کے تیسرے مجموعے میں ہوتی ہے۔ میں شروع ہی سے اس افسانے کے مرکزی کردار حافظ شکراللہ خان کے ساتھ ہولیا تھا ، اس کے باوجود کہ افسانہ نگار نے لوگوں سے ناحق اُسے حافظ گینڈا کہلوایا ۔ ایک بے ضرر شخص جس کے بارے بتا دیا گیا ہو کہ وہ صاحب علم تھا کم گو اور اپنی بات اجمالاً کہنے والا، لادینوں سے بھی بھل منسی سے پیش آنے والا ، تو ایسے شخص کو جو بہ ظاہر محترم ہو گیا تھا، گٹھے ہوئے ورزشی بدن والا روہیلہ ہونے کے باوجود پیٹھ پیچھے حافظ گینڈے سے پکارا جانا مجھے ہضم نہیں ہوا ۔ خیر افسانہ نگار نے بتا رکھا ہے کہ حافظ شکراللہ خان نے اپنے گاؤں روہ ری سے نسبت کی وجہ سے سلطان ہند شیر شاہ سوری سے ملنے کا قصد کیا ۔ اس نے سوغات میں دینے کے لیے اس ٹبے سے مٹی اٹھا کر زربفت کے پارچے میں باندھی جس پر کبھی سوریوں کا حجرہ اور باڑا تھا۔ راستے کی صعوبتیں سہیں اور جب وہ دارالخلافہ کی ایک سرائے میں مقیم تھا تو اس نے رات کو عجب لوگوں کا گروہ دیکھا ۔ دن میں میٹھے حلیم اور ملنسار ہو جانے والے لوگوں کا گروہ جو رات ایک دائرے میں بیٹھے ایک دوسرے پر غراتے اور اپنے اپنے حلقوم سے غیظ و غضب کی آوازیں نکالتے تھے۔ افسانہ انکشاف کرتا ہے کہ وہ لوگ ’’مردُوزی‘‘ تھے ۔ صدیوں کی تعلیمات مدنیت کا بگاڑ فرقہ مردْوزی کی بابت کہانی نے یہ بھی بتایا ہے کہ صاحبان شوکت اسے اپنے مقاصد میں مفید اور فیض رساں پاتے ہیں سو یہ مسلک دارالخلافوں میں خوب پھل پھول رہا ہے۔ اپنے وجود کے غصے کو رات کی تاریکی میں تباہ کرکے پھینک ڈالنے اورملنسار ہو جانے والوں کا وتیرہ حافظ شکر اللہ خان کو پسند نہ آیا ۔تاہم اس نے آدمی میں موجودغصے کے اس طرح بالالتزام ضائع کیے جانے پر نوحہ نہیں لکھا ، امیر کو ایسا خط لکھا کہ کہانی میں نقل نہیں کیا جا سکتا تھا ۔ پھر سلطان ہند کے لیے لائی گئی سوغات وہاں ملنے والے علم دوست فے روز کو تھمائی اور واپس ہو لیا۔ افسانہ بتاتا ہے کہ فے روز نے سوریوں کے حجرے اور باڑے والی مٹی کی سوغات برف جیسے پھولوں کے تختے پر جھاڑ دی تھی، جہاں اگلی صبح، سفید پھول نہ تھے انگارہ سے لال گلاب دہک رہے تھے۔
یہ انگار ہ سے لال گلاب اسد محمد خان کے بیانیے کے اسلوب کا رنگ، روپ اور خوشبو ہیں ۔ جب اسے اپنے کرداروں کا بدلنا گرفت میں لینا ہوتا ہے تو وہ ان گلابوں کی مہکار اور بڑھا لیا کرتا ہے ۔ بات اسد محمد خاں کے کرداروں کی ہو رہی ہے ،اور اس باب میں نے ’’باسودے کی مریم ‘‘ (۱۵)کا ذکراوپرکیا تھا ۔ ایک عجب ڈھب کا کردار جس کے خیال میں ساری دنیا بس دوشہروں کا نام تھی ۔ مکہ مدینہ اور گنج باسود ہ ۔ ممدو کی ماں مریم کے لیے مکہ مدینہ سریپ ایک شہر تھا ، اس کے حجورؐ کا سہر اور دوسرا اس کے چھوٹے بیٹے ممدو کا گنج باسودہ ۔ ممدو جس کی بابت کہانی کے راوی کی ماں کی وساطت سے مریم کی عجب وصیت پوری کرائی گئی ہے ۔ میں اپنے لفظوں میں کہوں گا تو مزہ جاتا رہے گا، افسانے کی آخری سطور نقل کیے دیتا ہوں۔
’’ پینسٹھ میں ابا اور اماں نے فریضہ حج ادا کیا۔ اماں حج کر کے لوٹیں تو بہت خوش تھیں ۔ کہنے لگیں ، ’’ منجھلے میاں ! اللہ نے اپنے حبیبؐ کے صدقے میں جج کرا دیا ۔ مدینے طیبہ کی زیارت کرادی اور تمہاری انا بوا کی دوسری وصیت بھی پوری کرائی ۔ عذاب ثواب جائے بڑی بی کے سر ، میاں ہم نے تو ہرے بھرے گنبد کی طرف منھ کرکے کئی دیا کہ یا رسول اللہ ؐ ! باسودے والی مریم فوت ہو گئیں ۔ مرتے وخت کہہ رئی تھیں کہ نبیؐ جی سرکار میں آتی ضرور مگر میرا ممدو بڑا حرامی نکلا ۔ میرے سب پیسے خرچ کر دیے۔‘‘
افسانہ جہاں ختم ہوتا وہیں سے ممدو کی ماں مریم کے دل سے اپنے حجورؐ کی محبت کا اجالا سارے میں پھیل جاتا ہے یوں کہ بس ایک ہی شہرباقی رہ جاتا ہے مکہ مدینہ ، دو شہروں کا ایک شہر، ایک مرکز ، اسلامی تہذیب کے کمزور سے کمزور کردار کے لیے قوت کا استعارہ ۔
کمزور کردار طاقت ور کیسے ہو جاتا ہے اور طاقت ورکیسے ڈھینے لگتا ہے ، اسد محمد خاں کا مطالعہ اور مشاہدہ اس باب میں بہت گہرا ہے وہ ایسے کرداروں کو بہت باریکی اور بہت ریاضت سے لکھتا ہے ، اس باب میں اُس کی کئی کہانیاں اور ان کے کردار میری نظروں کے سامنے گھوم گئے ہیں مگر یہاں آپ کی توجہ’’ ندی اور آدمی ‘‘(۱۶) کے دوکرداروں کی طرف چاہیئے ۔یوں تو ، ندی میں پہلی بار جو اترے وہ چار تھے مگر زندگی کا جس نہج سے مطالعہ کیا گیا ہے اس میں دوکردار اس کہانی میں مرکزی حیثیت اختیار کر جاتے ہیں، شناور غلزئی اور فرید خان سوری۔ وہ جنہیں پیراکی سکھانے والے کی پہلے دن ہی سمجھائی گئی عجب بات سمجھ بھی آگئی تھی کہ جس ندی میں وہ اترے تھے ، پیراکی کرنے سے پہلے پیراکوں کے اندرتیرنی چاہیئے ۔ یہی سبب ہے کہ زقندیں بھرتے وحشی بچھڑے ندی میں اترے تو ندی ان کے اندر تیر رہی تھی ۔ پھر یوں ہوا کہ وہ ندی چھوڑ کر کہیں دور جا بیٹھے اور ندی پھر بھی ان کے اندر تیر رہی تھی ۔ پتن چھوٹنے کے بعد کہانی وہ بھید کھولتی ہے جس کی جانب میں اشارہ اوپر کر آیا ہوں ۔
’’ العظمت للہ!، اپنے بادشاہ کی آواز سنی تو خواب گاہ کے بھاری سنگی ستون کی اوٹ میں قالین پر دو زانو بیٹھے خادم خاص شناور غلزئی نے آیت کریمہ پڑھنی بند کی اور فرش پر بھاری پنجہ ٹیک کے جھٹکے سے اٹھ کھڑا ہوا ۔ ۔۔۔۔ اپنے فرغل کے تکمے باندھتا شاہی چھپرکھٹ کے پائینتی جا پہنچا۔ بنگالے کی اعلیٰ سوتی مچھر دانی کے پار مومی شمعوں میں اس نے دیکھا کہ سلطان نے کہنی کے بل اٹھنے کی کوشش کی ہے مگر یوں لگا کہ ان سے اٹھا نہیں جا رہا اور وہ تھک کر تکیوں پر دراز ہو گئے ہیں ۔ شناور نے مچھر دانی ہٹانے کے لیے بے اختیار ہاتھ بڑھایا ، پھر کھینچ لیا ۔
ادب ،شناور! یہ فرید خان نہیں سلطان مملکت ہیں ۔
سلطان گہرے سانس لیتے ہوئے کراہنے لگے ۔ انہوں نے منھ ہی منھ میں کچھ کہا ، شاید ایک لفظ’’ندی‘‘ شناور کچھ سمجھ نہ پایا مودب سرگوشی میں بولا : ’’ بادشاہا !‘‘
سلطان خاموش رہے ۔۔۔۔ شناور نے پھر عرض کیا ’’ سلطان عادل!‘‘
شیرشاہ نے جواب نہ دیا بجھتے ہو ئے ذہن کے ساتھ سوچا کہ یہ شناور غلزئی یہاں کیوں کھڑا ہے ؟ ابھی تو ہم ندی میں تھے کرم ناسا میں ۔ ‘‘
افسانہ نگار چاہتا تو کہانی یہاں ختم ہو سکتی تھی کہ کرم ناسا کی پیچھے رہ جانے والی ندی پھر سے بہنے لگی تھی مگر اس نے علیل ہو جانے والے شیر شاہ سوری کی کہانی کو آگے چلایا یہاں تک کہ ممالک ہند کا دل فرید خان سوری کے دل کے ساتھ دھڑکنے لگا تھا ۔
’’ وقت لوگوں کو بدل سکتا ہے۔۔۔ بدل دیتا ہے۔‘‘
یہ بات اس کے کرداروں نے اوپر سجھائی اور وہ خود اپنی کہانی’’اِک میٹھے دن کا انت‘‘(۱۷)کے عین آغاز میں لکھ آیا ہے ۔ اس نے ڈیڑھ جملے کے اس ایک جملے میں ’’کیوں؟‘‘ کا حرف نہیں لکھا مگر صاف دکھتا ہے کہ یہی اس کی اُلجھن ہے جسے وہ سلجھانے میں جتا ہوا ہے ۔ ایک اور اُلجھن بھی تھی جو اس پر اب پانی ہو گئی ہے اور جسے بس سایے کی صورت ہی دیکھا جا سکتا ہے ، ذرا فاصلے سے،جیسے صحرا میں دُور لرزتے ہوئے سایے ہوں ۔ سایے کہ جن کے آر پار دیکھا جا سکتا ہو ۔ تو اس معدوم ہو جانے والی الجھن کو بھی خود افسانہ نگار کی زبانی سن کر آنک لیجئے :
’’وقت جنہیں مار دیتا ہے ، انہیں وہ بالکل ویسے ہی جیسے کہ وہ تھے ، ایک ہمیشگی میں لٹکائے رکھتا ہے ۔۔۔ کسی بھی طرح بدلے بغیر، ایک ٹھس کہانی کار کی طرح ،انہیں لکھ کر بھول جاتا ہے ۔ ‘‘(۱۸)
اسی الجھن کی معدومیت کی دین ہے کہ اپنی زندگی ہی میں متروک ہو کر مردہ ہو جانے والے کردار اس کی کہانی کے حاشیے سے آگے نہیں بڑھ پاتے ، متن میں دور تک گھس کر اسے ٹھس نہیں ہو نے دیتے ۔اس کی ٹھسک اور، بھڑک اور شان اور حشر سامانی میں خلل نہیں ڈالتے۔
ہاں تو بات ہو رہی تھی وقت کی جو لوگوں کو بدل دیتا ہے ۔۔۔ بل کہ اس وقت کی، کہ جو نہ جانے کیوں لوگوں کو اتنا بدل کر رکھ دیتا ہے؟ ، اور اس باب میں ’’اِک میٹھے دن کا انت‘‘ سے مثال لینے چلا تھا مگریوں ہے کہ مجھے، اسی طرح کے طوائفوں والے ایک اور افسانے نے اپنی جانب متوجہ کر لیا ہے ۔ جی ، یہ افسانہ ہے لاجی بائی اسیر گڑھ والی کے بدل جانے، زانو پر کہنی ٹکائے،مہندی لگی اپنی گول مٹول ہتھیلی پر ٹھوڑی رکھے بت بن جانے ، ڈی کے ہونے اور ققنس کی طرح اپنی ہی راکھ سے جی اٹھنے والی کی کہانی ’’برجیاں اور مور‘‘(۱۹)۔ تو یوں ہے کہ جسے مرنا ہوتا ہے وہ مر جاتا ہے ’’اک میٹھے دن کا انت ‘‘ کے اشک لائل پوری اور اس کے بیٹے ’’مرے مردار ماشٹر‘‘ کی طرح اور جسے جینا ہوتا ہے وہ بدلتا ہے ، اس کی زندگی بھی پہلو بدلتی ہے لاجی بائی کی طرح جس کی گائی ہوئی کجریوں کے ایک ایک نوٹ کی شکل کو بنک والا مظہر علی خاں کاغذ پر اتار سکتا تھا ۔ تو یہ شکلیں ماضی کی تھی ۔ نیپئرروڈ کے فلیٹ میں تو وہ ڈیرے دارنی تھی ، جسے گانا وانا نہیں آتا تھا ، جو پنڈت کوکاکاشمیری کے سب شاستر پڑھے بیٹھی تھی اور علم مسہری کی منتہا تھی۔ وہ کہانی میں ایسے ہی رہتی تو یہ کردار مردہ ہو کر تعفن چھوڑنے لگتا ، مگر اسد محمد خاں نے اس بدل جانے دیا، ڈی کے ہونے دیا اور پھر اسے اس کے میٹھے، رسیلے اور اجلے ماضی سے جوڑ کر زندہ کر دیا۔
تو صاحبو ! ماضی، محض گزرے وقت میں دفن ہونے کا حوالہ نہیں ہے،کہ اس سے جڑیں تو پھر سے جی اُٹھنے کا قرینہ آتا ہے۔ میں نے کہا نا ، اپنی راکھ سے ققنس کی طرح پھر سے جی اُٹھنے کا ۔ یہاں تک پہنچا ہوں تو میرے دھیان میں اسد محمد خاں کی ایک اور کہانی’’شہر کوفے کا محض ایک آدمی‘‘(۲۰) ہمارے وجودوں پر حرام خوری ، آلکسی اور کاہلی کی چڑھی چربی کو اپنی تیز آنچ سے پگھلا ڈالنے والے بیانیہ گونجنے لگا ہے۔ کہانی کے پہلے حصہ میں تاریخ کے وہ لمحات ہیں جنہوں نے زمرد اور یاقوت اورمشک اور عنبر کے بہتر تابوت اپنے کندھوں پر اٹھا ئے تھے ۔ بہتر آسماں شکوہ لاشوں کو سنبھالنے والے تابوت ۔ اسی حصہ میں کہانی کے راوی نے ایک ایسے آدمی کا تصور باندھنے کو کہا ہے جس نے کوفے سے امام عالی مقام کو خط لکھا تھا کہ:’’میرے ماں باپ فدا ہوں ،آپ دارالحکومت میں ورود فرمائیے ، حق کا ساتھ دینے والے آپ کے ساتھ ہیں ۔‘‘ اور وہ آدمی اپنے وجود کی پوری سچائی کے ساتھ اس بات پر ایمان بھی رکھتا تھا ، مگر خط لکھنے کے بعد گھر جا کر سو گیا۔
سویا ہوا یہ آدمی بعد میں زانو پیٹتا ہے ، گریبان چاک کرتا ہے ، روتا ہے اور اپنی نقاہت دور کرنے کے لیے خوب سیر ہوکرپھر سے سو جانے کی روش پر قائم رہتا ہے ۔ کسل مند ہو کر ڈھے جانے والا یہ کوفے کا آدمی آخر کار چیخ مار کر اپنی کسل مندی کی چادر پھاڑ دیتا ہے چھپر سہارے والی تھونی جھٹکے سے اکھاڑتا ہے ، یہ سوچے بغیر کہ اس چھپر تلے اس کی عورت اور بچے تھے اور فرات کے کنارے جا پہنچتا ہے۔ جب شمر نے گھوڑے کو مہمیز کیا تو یہ شخص اپنی ٹیڑھی میڑھی لاٹھی کے ساتھ قاتل اور مقتول کے درمیان پہنچ گیا تھا اور پھر شمر کے گھوڑے کے سموں تلے کچلا گیا ، دودھ ، پنیر،شہداور روغن زیتون اور تازہ خرمے سے پلا ہوا جسم ، جو کچلے جانے کے بعد قیمہ ہو گیا تھا گھوڑے کی لید میں سنا ہواقیمہ، جو رات بھر وہیں پڑا رہا اور جسے صبح دم چیونٹوں کی پہلی قطار نے دریافت کیا ۔ اپنے امام سے آخری لمحوں میں سچی وابستگی کا مظاہرہ کرنے والے کوفے کے اس آدمی ، جی اس زندہ جاوید آدمی کو کہانی کے دوسرے حصہ میں، کہ جہاں فلسطینوں پر ڈھائے جانے والے ستم کا ذکر ہو رہا ہے اور ان دعاؤں کا جن سے ہماری ہتھیلیا ں لبالب بھری ہوئی ہیں اور ساتھ ہی اس خوف کا جو جارح اور ظالم کے ٹینکوں کے سامنے جانے اور قیمہ قیمہ ہو جانے سے ہمیں روک دیتا ہے تو کہانی ماضی میں غوطہ لگاتی ہے اور ہمارے کسالت بھرے اور خوف کی چربی چڑھے بدنوں پر چرکے لگانے کے لیے ، کوفے کے اس ایک آدمی کو ، زندہ جاوید آدمی کو سامنے لے آتی ہے ۔ہاں ،ہمارے بدنوں پر چرکے لگانے کے لیے۔ مگر یوں ہے کہ ہم میں اتنی بھی استقامت نہیں رہی کہ چولہے میں سے جلتی لکڑی ہی کھینچ کر ظالم کے مقابل ہو سکیں ۔ کہ ہمیں تو ہمارے پنیر اور روغن زیتون اور خرمے کھا گئے ہیں، قیمہ بنا گئے ہیں اور ہمیں چیونٹوں کی پہلی قطار نے دریافت کر لیا۔
اپنی کتاب’’ تیسرے پہر کی کہانیاں ‘‘ میں ’’اک ٹکڑا دھوپ کا‘‘(۲۱) کی ذیل میں اسد محمد خاں نے لکھا تھا ؛
’’آدمی کتنے ہی لوگوں کے ساتھ زندگی کرنا چاہتا ہے ، مگر یہ پورا پھیلاؤ کچھ اس طرح کا ہے کہ ایسا ہو نہیں پاتا جیسا آدمی چاہتا ہے ۔۔‘‘
ہاں عین مین ، اس طرح ، بالکل اس طرح نہیں ہو سکتا، جس طرح وہ تمنا کرتا ہے مگر اسد محمد خاں نے جتنے لوگوں کے ساتھ زندگی بتائی ہے، اپنے اردگرد کے ، اپنے کٹمب قبیلے علاقے کے اپنی تاریخ تہذیب کے، اور ان سے ایک رشتہ قائم کرکے انہیں کاغذ پراُ تارا ہے یوں کہ ہم بھی ان کے ساتھ زندگی بتا رہے ہیں ، تو یہ بھی کچھ کم نہیں ہے ، اس نے اپنے فکشن کی جو بستی بسائی ہے ، ان کہانیوں کی صورت میں جو افسانہ ہو گئیں یا ان کہانیوں کی صورت میں جو فقط فکشن کے پارچے ہیں ، میں تو اسے اردو ادب کے اندر ایسی زندہ بستی سے تعبیر دوں گا جس کے اندر کئی زمانے ہیں اور کئی موسم ہیں اوروہاں کا ہردریچہ ان گنت مناظر پر کھلتا ہے اوران مکانوں میں ،وہاں کے سردوگرم میں اور منظروں میں کئی زمانوں کے لوگ بستے ہیں ، زندگی اور موت کے جھٹ پٹے میں ،ڈی کے ہوتے ہوئے اور اسد محمد خاں کی کہانیوں میں امر ہوتے ہوئے۔

حوالہ جات/ حواشی
۱۔ اسد محمد خاں،افسانہ ،’’ساتواں حصہ: تورے مالینوس‘‘،(مشمولہ ،’’ٹکڑوں میں کہی گئی کہانی‘‘[پہلی اشاعت ۲۰۰۶ء])/ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘ مجموعہ،۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی/ صفحہ۷۵۴تا ۷۶۰
۲۔اسد محمد خاں،’’خانوں‘‘مشمولہ ،’’تیسرے پہر کی کہانیاں ‘‘۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی/ صفحہ۱۱۲ تا۱۱۶
۳۔ یہ بات اسد محمد خاں نے پاترا ندی کے حوالے سے کہی تھی ، دیکھیے افسانہ ،’’ساتواں حصہ: تورے مالینوس‘‘،(مشمولہ ،’’ٹکڑوں میں کہی گئی کہانی‘‘[پہلی اشاعت ۲۰۰۶ء])/ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘ مجموعہ،۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی/ صفحہ۷۵۶تا ۷۵۷۔ اس تحریر سے متعلقہ اقتباس:
’’میرا یہ ہے کہ میں اپنی زندہ ندی کو سن پینتالیس میں پہنچ کر آسانی سے ’ری کریٹ‘ کرلوں گا ۔ اس لیے کہ میرے پاس تو وہی پرانے نقش ہیں ، دھندلے۔۔۔ اور خوب صورت۔ پھر وہ مرحلہ درپیش ہوگا کہ جب اس ’ناموجود‘ کو۔۔۔ناموجود صرف میرے لیے۔۔۔ اس ناموجود پاترا ندی کو گاڑھے کیچڑ میں بدلتے یا زخم سے رستے سست روpussکی لکیر میں بدلتے دکھانا ہوگاتو پھر کوئی اور جتن کروں گا۔ بھائی !میں کچھ تو جان گیا ہوں کہ چیزوں پر موت کا اور decayکا ورود کس طرح ہوتا ہے۔‘‘
۴۔ ’’شاخ شجر‘‘ کی اصطلاح اسد محمد خاں نے اپنے ایک اور افسانے میں استعمال کی تھی، دیکھیے :افسانہ ،’ ’مئی دادا‘‘ ،(مشمولہ ،’’کھڑکی بھر آسمان‘‘[پہلی اشاعت ۱۹۸۲ء])/ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘ مجموعہ،۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی/ صفحہ۵۳۔
’’ [مئی دادا] مجھ سے کہتے تھے کہ میں تیرے کٹمب قبیلے کے’’ساکھ سجر‘‘ کا ماشٹر ہوں اور یہ کہ ’’ایساچاروں کھونٹ ساکھ سجر‘‘ میں نے کہیں اور نہیں دیکھا۔ ’’ساکھ سجر‘‘ سے ان کی مراد شجرہ نسب ہوتی تھی مگر ’’ چاروں کھونٹ ساکھ سجر‘‘ کیا ہوتا ہے ، یہ نہ میں نے کبھی پوچھا نہ انہوں نے کبھی بتایا۔‘‘
۵۔ اسد محمد خان نے یہ تفصیلات بڑے دل چسپ پیرائے میں فراہم کر رکھی ہیں ۔ دیکھیئے : ’’میں اور میرے لوگ ‘‘، مشمولہ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘ مجموعہ،۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی/ صفحہ۷۶۳تا ۷۶۴
۶۔ اسد محمد خاں، افسانہ ’’باسودے کی مریم‘‘ ،(مشمولہ ،’’کھڑکی بھر آسمان ‘‘[پہلی اشاعت ۱۹۸۶ء])/ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘ مجموعہ،۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی/ صفحہ۴۴ تا ۵۰
۷۔اسد محمد خاں، افسانہ ’’مئی داد‘‘ ،(مشمولہ ،’’کھڑکی بھر آسمان ‘‘[پہلی اشاعت ۱۹۸۶ء])/ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘ مجموعہ،۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی/ صفحہ۵۱ تا ۶۵
۸۔ اسد محمد خاں، افسانہ’’ترلوچن ‘‘،(مشمولہ ،’’کھڑکی بھر آسمان ‘‘[پہلی اشاعت ۱۹۸۶ء])/ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘ مجموعہ،۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی/ صفحہ۷۲ تا ۷۶
۹۔ اسد محمد خاں، افسانہ ’’فورک لفٹ ۳۵۲حمود الرحمن کمیشن کے روبہ رو‘‘ ،(مشمولہ ،’’کھڑکی بھر آسمان ‘‘[پہلی اشاعت ۱۹۸۶ء])/ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘ مجموعہ،۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی/ صفحہ۸۹ تا ۹۶
۱۰۔ اسد محمد خاں، افسانہ’’ ہے للاللا‘‘،(مشمولہ ،’’کھڑکی بھر آسمان ‘‘[پہلی اشاعت ۱۹۸۶ء])/ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘ مجموعہ،۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی/ صفحہ۱۰۲ تا ۱۰۵
۱۱۔ اسد محمد خاں، افسانہ’’ گھس بیٹھیا‘‘،(مشمولہ ،’’برج خموشاں ‘‘[پہلی اشاعت ۱۹۹۰ء])/ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘ مجموعہ،۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی/ صفحہ۱۱۳ تا ۱۲۵
۱۲۔اسد محمد خاں، افسانہ ’’ گھڑی بھر کی رفاقت‘‘،(مشمولہ ،’’برج خموشاں ‘‘[پہلی اشاعت ۱۹۹۰ء])/ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘ مجموعہ،۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی/ صفحہ۱۴۵ تا ۱۴۹
۱۳۔ اسد محمد خاں۔افسانہ ’’دھماکے سے چلا ہوا آدمی‘‘ مشمولہ ’’مکالمہ، (ہم عصر اردو افسانہ۔۲)،جنوری ۲۰۰۸ تا جولائی ۲۰۰۹ ، اکادمی بازیافت کراچی/صفحہ ۴۶ تا ۴۸
۱۴۔ اسد محمد خاں،افسانہ ’’غصے کی نئی فصل‘‘ ،(مشمولہ ،’’غصے کی نئی فصل‘‘ [پہلی اشاعت۱۹۹۷ء])/ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘ مجموعہ،۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی/ صفحہ۱۹۸ تا ۲۱۰
۵ ۱۔ اسد محمد خاں، افسانہ ’’باسودے کی مریم‘‘ ،(مشمولہ ،’’کھڑکی بھر آسمان ‘‘[پہلی اشاعت ۱۹۸۶ء])/ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘ مجموعہ،۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی/ صفحہ۴۴ تا ۵۰
۱۶۔ اسد محمد خاں، افسانہ’’ ندی اور آدمی ‘‘،(مشمولہ ،’’نربدا اور دوسری کہانیاں ‘‘[پہلی اشاعت۲۰۰۳ء])/ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘ مجموعہ،۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی/ صفحہ۵۷۷ تا۵۸۱
۱۷، ۱۸۔ اسد محمد خاں افسانہ’’اِک میٹھے دن کا انت‘‘،(مشمولہ ،’’نربدا اور دوسری کہانیاں ‘‘[پہلی اشاعت۲۰۰۳ء])/ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘ مجموعہ،۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی/ صفحہ۴۶۶ تا ۴۹۱
۱۹۔اسد محمد خاں ،افسانہ ’’برجیاں اور مور‘‘،(مشمولہ ،’’غصے کی نئی فصل‘‘ [پہلی اشاعت۱۹۹۷ء])/ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘ مجموعہ،۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی/ صفحہ۲۷۹تا ۲۸۶
۲۰۔اسد محمد خاں ، افسانہ ’’شہر کوفے کا محض ایک آدمی‘‘،(مشمولہ ،’’برج خموشاں ‘‘[پہلی اشاعت ۱۹۹۰ء])/ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘ مجموعہ،۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی/ صفحہ۱۷۰تا۱۷۴
۲۱۔ اسد محمد خاں، افسانہ ’’اک ٹکڑا دھوپ کا‘‘،مشمولہ ،’’تیسرے پہر کی کہانیاں ‘‘۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی/ صفحہ۹۶،۹۷
کتابیات
۱۔ اسد محمد خاں، ’’کھڑکی بھر آسمان‘‘[پہلی اشاعت ۱۹۸۲ء])/مشمولہ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘(صفحات ۳۳ تا ۱۱۰ ) مجموعہ،۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی
۲۔اسد محمد خاں، (مشمولہ ،’’برج خموشاں ‘‘[پہلی اشاعت ۱۹۹۰ء])/ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘(صفحات ۱۱۱ تا ۱۹۲ ) مجموعہ،۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی
۳۔ اسد محمد خاں،’’غصے کی نئی فصل‘‘ [پہلی اشاعت۱۹۹۷ء])/ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘(صفحات ۱۹۳ تا ۳۸۰ ) مجموعہ،۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی
۴۔ اسد محمد خاں،’’نربدا اور دوسری کہانیاں ‘‘[پہلی اشاعت۲۰۰۳ء])/ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘ (صفحات ۳۸۱ تا ۶۳۴ ) مجموعہ،۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی
۵۔ اسد محمد خاں ،’’ٹکڑوں میں کہی گئی کہانی‘‘[پہلی اشاعت ۲۰۰۶ء])/مشمولہ ’’جو کہانیاں لکھیں‘‘ مجموعہ،(صفحات ۶۳۵ تا ۷۶۴ ) ۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی
۶۔اسد محمد خاں،’’تیسرے پہر کی کہانیاں ‘‘(کل صفحات ۱۲۰ )۲۰۰۶ ، اکادمی بازیافت کراچی
۷۔مبین مرزا ’،’مکالمہ، (ہم عصر اردو افسانہ۔۲)،جنوری ۲۰۰۸ تا جولائی ۲۰۰۹ ، اکادمی بازیافت کراچی

About Urdufiction

یہ بھی دیکھیں

محمد حمید شاہد| احمدفراز کے عشق

علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی کے آڈیٹوریم میں احمد فراز کی یاد میں تقریب ہوئی تو …

اترك تعليقاً

لن يتم نشر عنوان بريدك الإلكتروني. الحقول الإلزامية مشار إليها بـ *