M. Hameed Shahid
Home / افسانے / جنم جہنم-2|محمد حمید شاہد

جنم جہنم-2|محمد حمید شاہد

jannam jahanam 2

وہ جو زِیست کی نئی شاہ راہ پر نکل کھڑی ہوئی تھی اُس کا دَامن گذر چکے لمحوں کے کانٹوں سے اُلجھا ہی رہا۔ اُس نے اَپنے تئیں دیکھے جانے کی خواہش کا کانٹا دِل سے نکال پھینکا تھا ‘مگر گزر چکے لمحے اُس کے دِل میں ترازو تھے۔
’’یہ جو گزر چکے لمحے ہوتے ہیں نا! یہ دراصل جو نکوں کی طرح ہوتے ہیں
لمحے۔ قطرہ قطرہ خُون پینے والے۔ اَندر ہی اَندر سے چاٹنے والے‘‘
اس کے سامنے زیست کی لمبی شاہ راہ تھی۔
اور اِرادہ تھا کہ وہ آگے بڑھتی رہے گی۔
مگر یادیں۔؟
اس نے انہیں پٹخ کر پرے پھینکا اور حتمی فیصلہ دے دیا کہ وہ انہیں قریب بھی نہ پھٹکنے دے گی۔
’’مگر یہ جو یادیں ہوتی ہیں نا! یہ پالتو بلی کی طرح ہوتی ہیں۔
دھتکارو‘مارو‘ نکال دو‘ پھر پلٹ آتی ہیں۔
اور جب پلٹ آتی ہیں نا!۔ تو یوں سارے میں اتراتی پھرتی ہیں جیسے وہ سرے سے نکالی ہی نہ گئی ہوں۔
یہ جو نکلنا اور نکالنا ہوتا ہے نا! اِن کے بیچ انا کا فاصلہ ہوتا ہے۔
نکلو تو اَنا انگلی تھامے آگے آگے ہوتی ہے‘ نکالے جاؤ تو قدموں تلے کچلی جاتی ہے۔‘‘
پہلے پہل وہ اس فیصلے پر پہنچنے میں اُلجھی رہی کہ وہ نکلی تھی یا نکالی گئی تھی؟
اور جب وہ فیصلہ نہ کر پائی تو اس کا دھیان یادوں کی جونکوں کی طرف ہوگیا۔
’’یہ جو دھیان ہوتا ہے نا! گرگٹ کی طرح ہوتا ہے۔
رنگ بدلتا ہوا۔ پل میں ایسا پَل میں ویسا
چکنا یوں کہ قابو میں نہیں آتا۔ پھسل پھِسل جاتا ہے۔‘‘
اب وہ کہ جس کا دِھیان قابو میں نہ تھا۔
اور جس کے اندر یادوں کی جونکیں مسلسل مگر قطرہ قطرہ خُون پیتی تھیں۔
اُس کے سامنے زیست کی لمبی شاہ راہ تھی۔
اس شاہ راہ پر اُسے آگے بڑھنا تھا۔
اس کے زادِ سفر میں پہلے پہل اُمید کی چمک تھی‘ جو راستہ دکھاتی تھی
حوصلہ تھا‘ جو بڑھاوا دیتا تھا
سپنوں کی خُوِشبو تھی‘ جو اسے مدہوش رَکھتی تھی۔
مگر اب کچھ نہ تھا۔
نہ وہ تھا۔
نہ یہ تھا۔
بس تھی تو ایک لمبی شاہ راہ تھی جس کے ماتھے پر زیست کی تہمت دَھری تھی
بے شمار مگر ندیدی آنکھیں تھیں
لمبے لمبے مگر مکروہ ہاتھ تھے
بھاری‘ مضبوط اور سفاک قدم تھے
آنکھیں بدن چیرتی تھی‘ ہاتھ مسلتے تھے اور قدم کچل کچل دیتے۔
اور وہ کہ جسے بہت پہلے یہی کچھ پانے کی حسرت تھی پہلے پہل لذت کے پیالے آبِ حیات سمجھ کر پیتی رہی
پیتی رہیاور جیتی رہی۔
کس قدر سرور تھا‘ نشہ تھا‘ مٹھاس تھی۔
’’یہ جو نشہ ہوتا ہے نا! ۔اوّل اوّل یہی زِندگی کا حاصل ہوتا ہے۔
مگر آخر کار زِندگی نفی ہو جاتی ہے اور نشہ ہی نشہ رہ جاتا ہے۔‘‘
جب زِندگی منہا ہوگئی
اور لذّت بھی یکسانیت نے نگل لی۔
تو بدن کھوکھلا ہو گیا۔
اور یوں بجنے لگا جیسے پھٹا ہوا ڈھول ہوتا ہے۔
تب اُس نے اِدھر اُدھر دیکھا
اسے کچھ نظر نہ آیا۔
جو نظر آئے تو وہ خواب تھے‘ جو بے تعبیر تھے۔
’’یہ خواب ہوتے ہیں نا!۔یہ دراصل نا آسُودہ خواہشوں کا عکس ہوتے ہیں۔‘‘
اوریہ اُس کی کیسی ناآسُودہ خواہشیں تھیں‘جو وہ سیراب ہو کر بھی پیاسی کی پیاسی تھی
اور اس چشمے کو پلٹ پلٹ کر دیکھتی تھیں جو سراب سے بھرا ہوا تھا
’’یہ جو سراب ہوتا ہے نا!۔یہ حقیقت ہوتی ہے۔
اور یہ جو حقیقت اور سراب کو الگ الگ شے سمجھنا ہوتا ہے نا!یہ محض ہمارے شعور کا التباس ہے۔‘‘
اور جو پیچھے پلٹ پلٹ کر خشک چشمے کو دیکھتی تھی تو اُسے وہ لبالب بھرا ہوا لگتا تھا۔ اور اَپنی راہ میں آنے والے اُچھلتے کودتے پانی کو دیکھتی تھی تو وہ صحرا کی اُڑتی دُھول لگتی تھی
وہ سوچتی تھی ۔ اَصل کیا ہے؟
اس نے سامنے دُور اُفق میں گم ہوتی شاہ راہ کی جانب دِیکھا اور سوچا۔ شاید اصل وہیں کہیں ہے۔
مگر جب وہ آگے بڑھی تو اُداسی اُس کے اَندر اُتر گئی۔
’’یہ جو اُداسی ہوتی ہے نا!۔ یہ گرد کی طرح ہوتی ہے۔ نہ جھاڑو تو تہ در تہ جمتی چلی جاتی ہے۔
یا پھر اُن سوئیوں کی طرح‘ جن میں سارا بدن بیندھا ہوتاہے‘ یو ں کہ بھیگی شام کو سوئیاں چبھوئی گئی ہوں تو رات پڑجاتی ہے سوئیاں نکال لی جائیں تو انگلیاں لہولہان ہو جاتی ہیں اورنہ نکالی جائیں تو سارا بدن سن ہو جاتا ہے۔‘‘
اس نے پوروں سے اُداسی کی ایک ایک سوئی کو ٹٹولا محض ٹٹولنے ہی سے اُس کی پوریں زخمی ہوگئیں۔
اُس نے سوئیاں بندھے بدن کو سہلایا‘ خلیہ خلیہ سن ہور ہا تھا
اُس نے ہمت کر کے ایک ایک سوئی نکال پھینکی۔
اور زخمی پوروں سے گرتے قطروں میں اپنے ہونٹوں کے عکس کو تلاش کیا۔
ابھی تک رَس بھرے تھے۔
قوسوں کو دیکھا۔ ندرت تھی
بدن ٹٹولا۔ مدھ بھرا تھا۔
بازؤوں کو جانچا۔ وارفتگی تھی۔
جب تک رس رہا ندرت رہی مدھ رہا وارفتگی رہی
وہ‘ جو بھی آتا سمٹاتی رہی اور آگے ہی آگے بڑھتی رہی۔
آگے۔ آگے۔ مزید آگے
مگر اِس کا اَنت کیا ہے؟۔
اُس کے اندر ٹوٹے حوصلے کی صدا تھی
’’کچھ بھی نہیں۔‘‘
’’گویا۔ یہ جو انت ہوتا ہے نا!۔ یہ کچھ بھی نہیں ہوتا۔
یہ توفقط سراب ہے‘ دھوکا ہے‘‘
مگر یہ جو چلنے والے ہوتے ہیں‘ رُکتے کیوں نہیں؟
’’رُکیں کیسے۔ کہ ہر اَنت کا سراآغاز سے جڑا ہوتا ہے۔
یوں اَنت تو آغاز ہی کا دوسرا نام ہوا‘ نا!۔‘‘
اور وہ جو اَنت چاہتی تھی اسے پتہ ہی نہ چل رہا تھا کہ شروعات کہاں تھیں اور اَنت کہاں
اَنت اور آغازگڈمڈ ہو رہے تھے
اور وہ اپنے ہی محور پر گھومتی جا رہی تھی۔
’’یہ جو اپنے ہی محور پر گھومنا ہوتا ہے نا!۔ اِس سے چلنے اور ساکن ہونے کا فرق مٹ جاتا ہے۔‘‘
اور وہ جو اپنے ہی محور پرچل رہی تھی۔
یاگھوم رہی تھی۔
یا پھر جو ساکت تھی۔
اور اگر وہ ساکت تھی تو دوسرے چل رہے تھے
وہ بھی چل نہ رہے تھے‘ گھوم رہے تھے
اور جو گھوم رہے تھے‘ اُسے بھی گھما رہے تھے۔
اور جو گھما رہے تھے‘ اُس کا ہاتھ تھامتے تھے۔
جب ہاتھ تھام چکتے تھے تو قدم اُس کے اُوپر دَھرتے تھے۔
اور جب وہ ہمت کر کے ایک سے ہاتھ چھڑا لیتی تھی تو کوئی دوسرا تھام لیتا تھا
پھر تیسرا۔وہ سب ایک ایک کر کے بدلتے رہے
ایک جیسے چہرے
ایک جیسی سر گوشیاں
ایک جیسی آوازیں
ایک جیسے بدن۔
ایک جیسی سختی۔
ایک جیسی نرماہٹ۔
اورپھر۔یہاں وہاں۔ پانی ہی پانی۔
صاف‘ شفاف‘ موتیوں کی طرح چمکتا‘ پھسلتا
یا پھر بدبو دار‘ گندا‘ تعفن پھیلاتا‘ اچھلتا‘ کودتا۔
اور ان پانیوں کے بیچ پچھتاوے۔
اور ان پچھتاوں کے بیچ چہروں کا طلوع و غروب
تو کیا زیست کی طویل شاہ راہ کا سفر ایسا ہی ہے؟
اور یہ زیست کیسی ہے جو کچلتی ہی جا رہی ہے؟
اس نے کچل دینے والی زِیست کو دِیکھا۔
او ر جانا؛
’’زیست اور کچھ بھی نہیں ‘بس لعنت ہی لعنت ہے۔‘‘

ٍ


 

jannam jahanam 1
Click to read
jannam jahanam 3
click to read

 


کچھ جنم جہنم سلسلے کے افسانوں کے بارے میں

متن در متن یعنی  فریم نیریٹو کی صورت گری

توصیف تبسم
توصیف تبسم

محمد حمید شاہد کے افسانوں کو پڑھتے ہوئے ‘ دنیا سے متعلق ہمارے سابق یا بھولے بسرے علم کا احیا ہی نہیں ہوتا‘ بلکہ ہمیں باہر کی دنیا کا نیا ادراک حاصل ہوتا ہے‘ یعنی ہم محض بازیافت ہی نہیں کرتے بلکہ نئی یافت سے ہم کنار بھی ہوتے ہیں۔ بقول مبین مرزا فکشن محمد حمید شاہد کا مشغلہ نہیں بلکہ زندگی اور موت کا مسئلہ ہے۔ فن سے سچی اور کھری وابستگی نے افسانہ نگار کو ایک ایسی راہ پر گامزن کر دیا ہے جہاں خارجی حقیقت نگاری اور باطنی صداقت پسندی مل کر ایک ہو گئی ہیں ۔ انسانی زندگی کاا لمیہ ہویا سیاسی وسماجی حالات کا دھارا‘ محبت کے کومل جذبے ہوں یا رشتوں کی مہک‘ ریاستی گروہی جبر ہو یا عالمی دہشت گردی یا پھر تہذیبی حوالوں کو نگلتی بازاری ثقافت ‘محمد حمید شاہد کا قلم یکساں روانی اور تخلیقی وقار کے ساتھ سب کو سمیٹتا چلا جاتا ہے۔
فن کار کا ایک منصب یہ بھی ہے کہ وہ اپنی تخلیق کو انسانی فطرت سے ہم آہنگ کرے۔ محمدحمیدشاہد نے اپنے بیانیے کو ایک سے زائد سطحوں پر یوں متحرک کرلیا ہے کہ وہ مطلق طور پر انسانی آہنگ میں ڈھل گیا ہے۔ اسی لیے تو احمد ندیم قاسمی کو کہنا پڑا کہ” محمد حمید شاہد کے افسانوں کا ایک ایک کردار ‘ایک ایک لاکھ انسانوں کی نمائندگی کرتا ہے۔“ خود شعوریت سے جہاں افسانہ نگار نے متن در متن یعنی  فریم نیریٹو کی صورت گری کی ہے وہاں انہوں نے اپنے افسانوں کو ایک نئی قسم کی حقیقت نگاری کی راہ بھی سجھا دی ہے ۔ محمد حمید شاہد کے ہاں نوحقیقت پسندی کے حوالے سے عمدہ مثال بن جانے والے افسانوں میں” برف کا گھونسلا“ ” برشور“ ” لوتھتکلے کا گھاﺅ“ ” ملبا سانس لیتا ہے“ ” موت منڈی میں اکیلی موت کا قصہ“ ”جنم جہنم“”چٹاکا شاخ اشتہا کا“ ” آدمی کا بکھراﺅ“ ”پارہ دوز“ اور ” مرگ زار“ جیسے افسانے شامل ہیں۔ واضح رہے کہ بقول ناصر عباس نیر، محمد حمید شاہد کی نو حقیقت پسندی دراصل زندگی پر غیر مشروط مگر کلی نظر ڈالنے سے عبارت ہے اور یہ اس توازن کو بحال کرتی ہے جسے جدیدیت پسندوں کی نافہمی اور ترقی پسندوں کی انتہا پسندانہ روشوں نے پامال کر دیا تھا۔ محمد حمید شاہد کےافسانے سورگ میں سور“”گانٹھ “ اور مرگ زار“  پاکستان اور اردو ادب کے شاہکار تسلیم کیے جائیں گے

ڈاکٹر توصیف تبسم 


 

 



محمد حمید شاہد کے افسانے

Click to read now

 

About Urdufiction

یہ بھی دیکھیں

وَاپسی|محمد حمید شاہد

محض ایک ہفتہ باقی تھاا ور وہ ہاتھ پاﺅں چھوڑ بیٹھا تھا۔ حالاں کہ اُس …

38 تعليق

  1. Pingback: » جنم جہنم-3|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  2. Pingback: » جنم جہنم-1|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  3. Pingback: » دُکھ کیسے مرتا ہے|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  4. Pingback: » موت منڈی میں اکیلی موت کا قصہ|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  5. Pingback: » منجھلی|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  6. Pingback: » واپسی|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  7. Pingback: » بَرشَور|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  8. Pingback: » مَرگ زار|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  9. Pingback: » گانٹھ|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  10. Pingback: » مَلبا سانس لیتا ہے|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  11. Pingback: » آدمی کا بکھراﺅ|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  12. Pingback: » پارہ دوز|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  13. Pingback: » کیس ہسٹری سے باہر قتل|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  14. Pingback: » مراجعت کا عذاب|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  15. Pingback: » پارو|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  16. Pingback: » نئی الیکٹرا|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  17. Pingback: » رُکی ہوئی زندگی|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  18. Pingback: » لوتھ|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  19. Pingback: » آئنے سے جھانکتی لکیریں|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  20. Pingback: » تکلے کا گھائو|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  21. Pingback: » موت کا بوسہ|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  22. Pingback: » ادارہ اور آدمی|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  23. Pingback: » شاخ اشتہا کی چٹک|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  24. Pingback: » کہانی کیسے بنتی ہے|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  25. Pingback: » کہانی اور کرچیاں|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  26. Pingback: » گرفت|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  27. Pingback: » آخری صفحہ کی تحریر|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  28. Pingback: » جنم جہنمM. Hameed Shahid

  29. Pingback: » سجدہ سہو|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  30. Pingback: » ناہنجار|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  31. Pingback: » دوسرا آدمی|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  32. Pingback: » اپنا سکّہ|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  33. Pingback: » آٹھوں گانٹھ کمیت|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  34. Pingback: » اللہ خیر کرے|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  35. Pingback: برف کا گھونسلا|محمد حمید شاہد – M. Hameed Shahid

  36. Pingback: وَاپسی|محمد حمید شاہد – M. Hameed Shahid

  37. Pingback: کِکلی کلیر دِی|محمد حمید شاہد – M. Hameed Shahid

  38. Pingback: پارِینہ لمحے کا نزول|محمد حمید شاہد – M. Hameed Shahid

اترك تعليقاً

لن يتم نشر عنوان بريدك الإلكتروني. الحقول الإلزامية مشار إليها بـ *