M. Hameed Shahid
Home / افسانے / موت منڈی میں اکیلی موت کا قصہ|محمد حمید شاہد

موت منڈی میں اکیلی موت کا قصہ|محمد حمید شاہد

mautmandi mein akeli maut

 

وہ مر گیا۔
جب نخوت کا مارا‘ امریکا اپنے پالتو اِتحادیوں کے ساتھ ساری اِنسانیت پر چڑھ دوڑا اوراعلٰی ترین ٹیکنالوجی کے بوتے پر سب کوبدترین اِجتماعی موت کی باڑھ پر رَکھے ہوے تھا ‘ وہ اِسلام آباد کے ایک ہسپتال میں چپکے سے اکیلا ہی مر گیا ۔
مجھ تک اُس کے مرنے کی خبر پہنچی تو میں سٹ پٹا گیا:
”ہائیں وہ مر گیا۔ نہیں‘ نہیں۔ مگر کیسے؟“
یہ سب بے معنی الفاظ تھے جو میری زبان سے بے اِرادہ نکلے تھے۔ اُسے سرطان تھا ‘ یہ میں جانتا تھا۔ ایک پھوڑا‘ اس کی رانوں کے عین وسط میں نکل آیا تھا‘ جسے کاٹ پھینکنے کے لیے دو آپریشن بھی ہوچکے تھے مگر اُس کی جڑیں پوری طرح کُھرچی نہ جا سکیں ۔
” میں کسی بھی وقت مرسکتا ہوں ‘ ‘
یہ اُس نے خود مجھے بتا یا تھامگر یوں کہ مجھے اُس کی بات کا یقین نہیں آیا تھا۔
ہم دونو ں کے بیچ عجب رشتہ رہا ہے۔ میں جو بھی بات کہتا رہا‘ چا ہے محض اُس کا دِل رکھنے ہی کوکہی‘ اُس نے فورا یقین کر لیا۔ مگر وہ سچ بات بھی کچھ اِس ڈَھب سے کرتارہا کہ مسلسل دہرائے ہوے جملے محض اس کی فرسٹریشن کا شاخسانہ لگنے لگتے۔ وہ اَپنی بیماری کی باتیں بھی یوں کرتا تھا جیسے بس یوں ہی کوئی بات کہنے کوایک بات کر رہا ہو۔ مرنے والی بات بھی اُس نے کچھ ایسے بے روح لفظوںمیں کہی تھی کہ اُس کی طرف بڑھتی موت کی چاپ مجھے سنائی نہ دی تھی۔ اُس سارے عرصے میں ‘کہ جب موت اُسے پچھاڑ رِہی تھی‘ وہ میری گرم جوش اور جذباتی توجہ حاصل نہ کر پا یاتھا۔ میںاُس کی بیماری کو ایسا عارضہ سمجھنے لگا تھا‘جو اَگر اُسے لاحق تھا تو اُس کی شخصیت کا حصہ ہو گیا تھا اور یہ عارضہ‘ میرے خیال میں‘ اتنا ہی بے ضرر تھا جتنا کہ مجھے لا حق رہنے والا آلکسی کا روگ اور اس روگ کی لذّت دینے والی کساوٹ۔
طالب علمی کے زَمانے تک الگ الگ تعلیمی اداروں میں ہونے کے باوصف ہم میں رابطہ رہا تو اس کی دو وجوہ تھیں۔ ایک ‘لکھنے کی للک اور دوسرا‘ لیڈری کا خبط ۔ ہم دونوں کی پہلی کتاب طالب علمی کے اسی دورانیے میں آئی تھی۔ یہ پہلی کتاب ہی اُس کی آخری کتاب بن گئی۔ ہم دونوں نے ایک برس الیکشن لڑا ۔ وہ اَپنے کالج میں یونین کا صدر بن گیا اور میں یونیورسٹی میں ہار کر طلبہ سیاست سے الگ ہو گیا۔ تاہم ایک طویل وقفے کے بعد جب اس شہر میں ہم دوبارہ ملے‘جو اُس کا شہرتھا نہ میرا‘ تو طالب علمی کے اُس عرصے کو بہت یاد کرتے تھے۔ اُس نے بتایا تھا کہ اِس درمیانی مُدّت میں بھی اُس نے مجھے یادرَکھا تھا۔ اُس نے یہ بات بالکل اُسی غیر جذباتی اَنداز میں بتائی تھی جیسا کہ بعد ازاں اَپنے مرجانے کے خدشے کا اِظہار کیا تھا۔ لہذا مجھے قطعاً یقین نہ آیا۔ لیکن جونہی میں نے اُسے سچ سچ بتا دِیاکہ میں تو اُسے بالکل بھول چکا تھا ‘ تو اُس نے ہونٹ چٹخا کرمجھے یوں گا لی دِی کہ میری سماعت اس کی لذّت سے بھر گئی تھی۔ میں نے اس کے چہرے کو غور سے دِیکھا ‘یقین کر لیا کہ وہ ہمیشہ کی طرح میری بات کا یقین کر چکا تھا۔
دوبارہ ملنے تک میں پانچ بچوں کا باپ ہوگیا تھا۔ اوروہ مرنے تک کنوارہ ہی رہا۔ حالاں کہ وہ مجھ سے کم از کم پانچ برس بڑا تھا۔ اَب ملا تو وہ عورتوں کی طرح اَپنی عمر چھپانے لگا تھا۔ مجھ سے نہیں ‘دوسروں سے۔ مجھ سے کیسے چھپا پاتا؟ کہ میں تو اُسے اُس وقت سے جانتا تھا جب وہ دھوبی گھاٹ والے کالج میں ایم اے کا طالب علم تھا۔ میں اس کے شہر کی یونیورسٹی میںان دنوں گریجویشن کر رہا تھا۔ وقت پر شادی نہ ہو تو جیسے کچھ ڈھلتی عمر کی لڑکیوں پر ہسٹیریا کے دورے پڑنے لگتے ہیں‘ایسے مرد بھی ہوتے ہیں جو ڈپریشن کا شکار ہو جاتے ہیں۔ پہلے پہل ‘میرا خیال ہے‘ اُس پر پڑنے والے ڈپریشن کے دوروں کا یہی سبب تھا۔ اِس میں بعد ازاں کوئی بہت عمدہ اور منفرد کام نہ کر سکنے کی جھینپ بھی شامل ہو گئی تھی۔
اُس کے مرنے کی خبر سنتے ہی میں نے اَپنے آپ کو بہت کو سا۔ خود پر خوب بَرسا اور تادِیر اُلجھتا رہا۔ اِس خجلت زدگی اور اُلجھاوے کا سبب وہ پچھتاوا تھاجوآخری دِنوں میں ڈھنگ سے اُس کی تیمارداری نہ کر سکنے کے باعث میرے وجود میں اُتر گیا تھا۔ مجھ تک جب خبر پہنچی اُس کی نعش ہسپتال سے اُس کے شہر کوروانہ ہوے پندرہ گھنٹے گزر چکے تھے۔ میں فوراً نکل کھڑا ہوتا تو بھی جنازے میں نہ پہنچ پاتا۔ لہذا اُس کے شہر نہ جانے کے لیے دِل کو سمجھا لیا۔ تا ہم ایک کسک مسلسل کسمساہٹ میں رَکھنے لگی تھی کہ آخر کیوںاس کے آخری بار ہسپتال میں ایڈمٹ ہونے کی خبر نہ پا سکا۔ حیف میری اِتنی بے خبری پر کہ وہ اِس دورانیے میں کئی روز اَذِیّت میں مبتلا رہنے کے بعد چپکے سے مر گیا۔
قدرے کم معروف اور ایک ضرر لکھنے والے کے حصے میں جتنی تعزیتی قراردادیں آ سکتی تھی‘ اُس کے حصے میں بھی آئیں۔ اُس کام کا تذکرہ بھی ہوا ‘جو اگر چھپ جاتا تو اُس کا نام زیادہ اَہم ہو سکتا تھا۔ مگر فورا بعداُس بارود کی بارش کا تذکرہ ہونے لگا جوافغانیوں کے بعد اَب مسلسل عراقیوں پر برس رہی تھی کہ یہ بارش جہاں برستی تھی وہاں سے موت کھمبیوں کی طرح اُگ آتی تھی۔ اِتنے بے پناہ مرنے والوں کے دَرمیان اُس کی موت اکیلی ہو گئی ۔ الگ…. بالکل اکیلی۔
موت کے اِس اَپادِھی موسم میں سفاک امریکا سارے اصول اور سارے ضابطے چھوڑ کر اِنتہائی بے حیائی سے یہ کَہ رہا تھا :
” جو ہماری بات نہیں مانے گا ‘اُسے الگ تھلگ کرکے رکھ دِیں گے-“
الگ تھلگ ہو جانے والے مارے جا رہے تھے۔ وہ اِنتہائی ڈھٹا ئی سے لفظ چبا چبا کر کہتا تھا:
” اگر آپ ہمارے ساتھ نہیں ہیں ‘ تو آپ ہمارے خلاف ہیں“
ایک سہم ہر کہیں سنسنا رہا تھا۔ یوں لگتا تھا ‘ پوری دُنیا زَنخوں کی ٹانگوں میںپڑی ہوئی تھی اور ان زنخوں کے اوپر ایک ہی تلنگا مرد تھا جو اُن کے چوتڑوں پر اَپنی شہوت بھری مردانگی کے دُرے برسا رہا تھا۔ وہ اِنتہائی گھمنڈ بھرے لہجے بار بار دہرائے جاتا تھا:
”ہم اِس بات کی اجازت نہیں دیں گے کہ دُنیا کا بدترین اسلحہ دُنیا کے بدترین حکمرانوں کے پاس رہے۔“
دُنیا بھر کے عام لوگ اُسے آئینہ دِکھانے اور اُس کے مکروہ چہرے پر تھوکنے کے لیے گلیوں میں نکل آئے تھے۔ مگرحکومتوں کے سربراہوں نے اَپنی اَپنی مصلحتوں کے اَسیر ہوکرساری دنیا کو اپنے جیسا زنخا بنا لیاتھا۔ کچھ نہ کر سکنے اور فقط ہاتھ نچانے یا فحش اِشارے کرنے والا زنخا۔
پھر یوں ہوا کہ اُس کے شہر جا نے کا موقع نکل آیا۔ میرے ساتھ منشا‘ فریدہ اور خلیق بھی تھے۔ آپ جانتے ہی ہیں اُن میں پہلے دو اَفسانہ نگار ہیںاور تیسرا شاعر۔ جس تقریب کے لیے ہم آئے تھے اُس سے فارغ ہو کر اُس کے گھر کو نکل کھڑے ہوئے۔ ہم چاروں میں سے کوئی بھی اُس کے گھر والوں سے پہلے نہ ملا تھالہذا اَپنے تئیں اَندازہ لگائے بیٹھے تھے کہ اَجنبیوں کی طرح دُعا کو ہاتھ اٹھائیں گے اور پلٹ آئیں گے۔ میں اُس کی قبر پر بھی جا نا چاہتا تھا کہ مجھے بہت ساری معذرتیں کرنا تھیںاور اس کی قبر کا پتا اس کے گھر والوں ہی سے مل سکتا تھا۔
جیسے ہی ہم اُس کے گھر پہنچے ‘جو سوچ کرگئے تھے‘ وہ سب بھول گیا۔ عجب کہرام مچا تھا کہ ہم بھی اپنے آپ پرقابو نہ رکھ پا ئے۔
پہلے اُس کے بھائی ہماری چھاتیوں سے لگے اور یوں دھاڑیں مار مار کر روئے۔ ایسا لگتا تھا ‘جیسے محض ہم وہاںنہیں آئے تھے ‘اُس کی نعش بھی ساتھ لائے تھے ۔ پھر اُس کی بہنیں روتی کرلاتی بھاگ کر آئیں اور بھائیوںکی پیٹھوں سے لگ کر ضبط کرتے ہوے گسکنے لگیں۔ ضبط نہ رہا تو پچھاڑیںکھانے لگیں۔ یوں کہ جلد ہی اپنے وجودوں سے بے نیاز ہو گئیں۔ آخر میں بھاری جثے اور بڑی عمر والی نڈھال سی عورت بوکھلائے ہوے داخل ہوئی ۔ یہ اُس کی ماں تھی اور لگتا تھا رو رو کر اس کی آنکھیں بہہ چکی تھیں۔ وہ دِیوار کا سہارا لیتے ہوے’ ’کون؟کون؟ کیا آگیامیرا بیٹا؟‘ کی تکرار کرتے آئی۔ آتے ہی ہم سب کے چہروں کو غور سے دیکھا۔ میں جو اُس کے پاس کھڑا تھا میرے کندھے پر ہاتھ رکھا اور کہا:
” کہاں ہے میرا بیٹا؟لاﺅ نا‘ بہنیں اُسے سہرا باندھیں“
پھر اُس نے دوہتڑ سے اَپنی چھاتی کو پیٹا اور حلقوم کو چیر کر نکلتی چیخ کو اوپر اُچھالتے ہوے کہا :
”ہائے او میرا ڈاہڈا ربّا“
یہ کہتے ہوئے وہ یوں چکرا کر گری کہ سب کے کلیجے دہل گئے۔ بیٹے بیٹیاں اُسے سنبھالنے میںلگ گئے تھے۔
واپس پلٹتے ہوے ہم سب چپ تھے ‘ فریدہ نے کہا:
” ماں کا دُکھ تو سنبھالے نہیں سنبھلتا۔“
منشا نے تائید کی :
”ہاںماںکا دُکھ‘ تو یوں لگتا ہے‘ ہماری ہڈیوں کے گودے میں اُتر گیا ہے۔“
میں چپ تھا۔ چپ ہی رہاکہ مجھ میں اَپنے دُکھ کے بیان کا سلیقہ نہیں ہے۔ تاہم خلیق بولا:
”ہمیں اِس درد کو اَپنی تخلیق کا حصہ بنانا چاہیئے۔“
فریدہ ‘جو اَب تک بہت سنبھل چکی تھی‘ کہنے لگی :
”میں تو اِس پر کہانی لکھوں گی۔ آپ دونوں بھی لکھیں نا “
پھر وہ خلیق کی طرف مڑی اور کہا:
” تم اِس پر نظم لکھنا۔“
واپس آئے ہمیں کئی روز بیت گئے ہیں۔ مجھے یقین ہے منشا اورفریدہ نے کہانیاں‘ جب کہ خلیق نے نظم بھی لکھ لی ہو گی۔ مگر میرا معاملہ یہ ہے کہ میں پھر اُن اِجتماعی اَموات میں اُلجھ گیا ہوں جو کوفہ‘کربلا اور بغداد والوں کا مقدّر ہو گئی تھیں۔ دُنیا کے بدترین حکمران نے اَپنے مہلک ترین اسلحے کے بھرپور اِستعمال سے سقوط بغداد کا مقصد حاصل کر لیا۔ جن مردوں‘ عورتوں‘ بوڑھوں اور بچوں کو اس ہلے میں مرنا تھا‘ مرچکے۔ خود کو اِنصاف پسند کہلوانے والی مکار دُنیااَپنے اَپنے مفادات کے تحفظ سے مشروط ہو کر اس ساری درندگی کاجواز بھی فراہم کر نے میں جُت گئی ہے ۔ اِقتداروالے اَپنا اقتدار بچانے کے لیے کہتے ہیں :
”ہماری باری نہیں آئے گی۔“
اور پھر اس رذلیل کے خُٹے سیلانے میں لگ جا تے ہیںجوسب کی باریاںباندھ رہا ہے۔ ہمیں’سب سے پہلے اپنا آپ‘ کا نعرہ دِے کر وہ جو سمجھانا چا ہتے ہیں اگروہ میں سمجھ بھی جاﺅں تو بھی تَھوک میں مرتے اِنسانوں کے خُون کی باڑھ مجھے اَپنی جانب آتی صاف نظر آتی ہے۔ اور اِس آگ کی باڑھ بھی جو بغداد کی ایک قدیم لائبریری میںاُٹھی اور ا ب سارے سچے لفظوں کو جلانے کے لیے چاروں اور بڑھ رہی ہے۔ ایسے میں اِجتماعی اموات پر لکھی گئی کوئی ایسی کہانی جسے ابھی میں نے لکھنا ہے‘بے حسی یا درندگی کی آگ سے مرنے والوں کو بچا پائے گی؟اور کیاوہ خود بھی جل جانے سے محفوظ رہ پا ئے گی؟
یہ ایسا سوال ہے جس نے مجھے کہانی اور اُمید ‘ دونوں سے دور کردیا ہے ۔ تا ہم گھٹی میں پڑی ہوئی اُمید اور عادت بن چکی کہانی نے ورغلا کر مجھے پھر لفظوں کی اشتہا کا اسیر کر دِیا ہے ۔
میں نے پکا ارادہ باندھ لیا ہے کہ میں کہانی ضرور لکھوں گا۔
پہلے اِجتماعی اموات پر اور پھر اکیلے میں مر جانے والے کی کہا نی۔
مگر ہو یہ رہا ہے کہ ہر بار کا غذ کورے کا کورا رہ جاتا ہے اور جب کئی کئی گھنٹے کہا نی کا ابتدائیہ سوچنے میں گزار کر ناکام اٹھتا ہوں تونہ لکھے جا نے والی کہانی‘ کسی نامرد پرایک فاحشہ کی طرح ہنسنے والی کی طرح‘ مجھ پر ہنستی ہے اور میںقلم کو کاغذ پر یوں نچاتا ہوں جیسے زنخا ہوا میں ہاتھ نچاتا ہے ۔ میں کھسیانا ہوکر اَپنے اَندر دِیکھتا ہوں۔ کچھ کھسیان پت ماند پڑتا ہے کہ میرے اندر ابھی تک ‘ہر کہیں رواج پا گئی بہیمت اور ناانصافی کے خلاف نفرت اور احتجاج کے شعلے اُٹھ رہے ہیں۔ گمان گزرتا ہے کہ شاید میں جلد ہی اِجتماعی اموات پر کہانی کہنے کی قوت پا لوں گا۔ اِسی موہوم اُمیدکے سہارے اکیلی موت پر لکھنے کو معرض ِالتوا میں ڈال دیتا ہوں۔
اگلے کئی روزکئی اموات پر ایک کہانی لکھنے کی تڑپ میں لَد گئے مگر ہو یہ رہا تھا کہ ہر بار کا غذ کورے کا کورا رہ جاتا۔ جب میں کئی کئی گھنٹے کہا نی کا ابتدائیہ سوچنے میں گزار کر ناکام اُٹھتا تونہ لکھے جا نے والی کہانی‘ کسی نامرد پرایک فاحشہ کی طرح ہنسنے والی کی طرح‘ مجھ پر ہنستی اور ہنسے چلی جاتی ۔
جن ادیبوں اور شاعروںنے اُس کے لیے تعزیتی قراردادیں‘سوانحی مضامین اور نظمیں لکھنا تھیں لکھ لیں تو میں نے بھی اِجتماعی اموات کی کہانی لکھنے کا ارادہ موقوف کر دیااور دوسروں کی طرح اُس کے درد میں ڈوبی ہوئی ایک بے ضرر کہانی لکھنے بیٹھ گیا۔ مگر یوں لگتا ہے کہ میرے قلم سے لکھنے کی قوت یوں بہہ گئی ہے جیسے دُنیا بھر کے مقتدر لوگوں کی رانوں کے بیچ سے وہ مردانگی جو حوصلہ دیتی تھی بہہ چکی ہے۔
ٍ


کچھ اس افسانے کے باب میں

محمد حمید شاہد انسانی رشتوں کی کیسی کیسی بوالعجب صورتوں کو کہانی کا موضوع بناتا ہے۔

سیّد مظہر جمیل
سیّد مظہر جمیل

”موت منڈی میں اکیلی موت کا قصہ“ ہر چند اسی عالمی تناظر میں لکھی گئی کہانی ہے جس میں 9/11 کے المناک واقعات افغانستان اور عراق سے بلند ہوتے ہوئے آتشیں شعلوں اور وحشت و بربریت کے بھیانک نظارے پس منظر کاکام دے رہے ہیں۔ لیکن دیکھیے تو اصل کہانی کا ان واقعات و حالات سے براہ راست کوئی تعلق نہیں ہے ‘سوائے اس حیاتی صورت حال ِکے ‘جس میں ایک عالمی حادثے میں وقوع پذیر ہونے والی لوگوں کی اجتماعی موت جائے واردات سے ہزاروں کوس دور مرنے والے فرد واحد کی موت کو بے دردانہ حد تک بے توقیر اور غیر اہم بنا دیتی ہے۔ دُکھ ‘ افسوس‘ تعزیت اورگریزناکی‘سب رسمیاتِ زمانہ ہیںجس کے اظہار کے لیے بھی مناسب ماحول درکار ہوتا ہے۔ عزاداری بھی کچھ قرینے چاہتی ہے ‘ کوئی کتنا ہی دُکھی اور ماتم گسار کیوں نہ ہو ‘ لوگ مرنے والوں کے ساتھ مر نہیں جاتے ۔ نوحہ گر صرف رسم زمانہ کی ادائیگی کرتا ہے۔ محمد حمید شاہد انسانی رشتوں کی کیسی کیسی بوالعجب صورتوں کو کہانی کا موضوع بناتا ہے۔

سیّد مظہر جمیل

کچھ اس افسانے کے باب میں


ایک لمحہ ایسا بھی آتا ہے جو لکھنے والے کے ہاتھ سے ، قلم خود چھین لیتا ہے

نجیبہ عارف
نجیبہ عارف

زندگی موت کی امانت ہے۔ اس لیے زندگی سے محبت کرنے والے لوگ ، موت کے زیر بار احسان رہتے ہیں۔ یہ ایسی کشش ہے جس کے دائروں سے نکل بھاگنا ان لوگوں کے لیے سہل نہیں، جو زندگی کو ہر پہلو سے چھو کر دیکھنا چاہتے ہیں۔ موت ایک اسرار ہے اور اسرار اپنی طرف بلاتے ہیں، آواز دیتے ہیں۔ حمید شاہد کی کتاب، ”مرگ زار“ اسی آواز پر لبیک کہتی ہوئی محسوس ہوتی ہے۔
اس کتاب میں کل پندرہ کہانیاں ہیں۔ اور تقریباً ہر کہانی میں موت کی آہٹ ہے۔ جذبوں کی موت، قدروں کی موت، چھوٹی بڑی انسانی مسرتوں کی موت،وعدوں کی موت، ارادوں کی موت، خوابوں کی موت اور سب سے بڑھ کر جیتے جاگتے، زندہ لہو سے گرمائے ہوئے بدنوں کی موت جس کی اذیت محض اس خیال سے کم نہیں ہو سکتی کہ جسم کی موت سے انسان نہیں مر سکتا۔ موت انسانی ذہن و خیال اور جسم کی حرکت کے خاتمے کا نام ہے۔کیونکہ عام عقائد کے مطابق، جسمانی موت کے بعد اس کا خیال اگر متحرک ہو گا تو اس حرکت کی نوعیت انفعالی ہو گی، فاعلی نہیں۔یہی وجہ ہے کہ موت کا تصور ایک احساس محرومی سے آشنا کر دیتا ہے۔ زندگی دامان ِ خیال ِ یار کی طرح ہاتھ سے چھوٹتی ہوئی محسوس ہوتی ہے۔ ریت کے ذروں کی طرح مٹھیوں سے چھن چھن کر گرتی ہوئی۔ ہاتھ میں صرف ایک احساس ِ زیاں کی تلچھٹ باقی رہ جاتی ہے۔
”مرگ زار“کی بیشتر کہانیاں اسی تلچھٹ کو کریدتی ہوئی نظر آتی ہیں۔ ان کہانیوں کے ہاتھوں میں کہیں سوالوں کی تیسیاں، کہیں تحیّر کی سوئیاں، کہیں بے بسی کی چھینیاں اور کہیں احتجاج وبغاوت کی کسیّاںہیں۔ یہ اقرار و انکار کے مخمصے میں پھنسے ہوئے انسان کی بے چارگیوں کا آئینہ ہیں۔ ایسا انسان جسے سادہ اور معصوم زندگی کے لطف و اہتزازکی تلاش بھی رہتی ہے اور اس شعور و آگاہی کا لپکا بھی ہے جو اس معصومیت کی قیمت پر ملتی ہے۔ اکیسویں صدی میں ایک چھوٹی مچھلی کے ٹرانس پی ¿رنٹ پیٹ میں رہنے والا انسان، جو بڑی مچھلیوں کی نقل و حرکت بھی دیکھ سکتا ہے اور ان کے ارادے اور نیت بھی سمجھ سکتاہے۔ اسے اپنے میدان ِ عمل کی تنگ دامانی کا احساس بھی ہے اور صور تحال کی نزاکت کا ادراک بھی۔ بھینس بننے سے انکار بھی ہے اور لاٹھی کی طاقت کا اندازہ بھی۔ وہ کبوتر کا تنِ نازک سہی مگر اسے آنکھیں بند کرنا پسند نہیں۔ اکیسویں صدی کی چھوٹی قوموں کے افراد جو اپنے گردو پیش کا تجزیہ کرنے کی صلاحیت بھی رکھتے ہیں اور اپنی اپنی تہذیب و ثقافت ، لسانی و علاقائی شناخت اور مخصوص روایات و اقدار کو ایک بے ہنگم اور بے شکل و صورت ملغوبے کے بلیک ہول میں گرتے ہوئے بھی دیکھ رہے ہیں، جس اندوہناک کربِ بے بسی سے دوچار ہیں، اس کی ایک واضح اور نمایاں جھلک اس کتاب میں دکھائی دیتی ہے۔
پندرہ میں سے چار کہانیوں کے تو عنوان ہی سے موت جھلکتی، بلکہ ٹپکتی ہے۔ ”مرگ زار“،” موت کا بوسہ“،” موت منڈی میں اکیلی موت کاقصہ“اور” دکھ کیسے مرتاہے“ ایسی کہانیاں ہیں جو اپنے تیز ناخنوں سے اپنا ہی کلیجہ چھیل چھیل کر ہی لکھی جا سکتی ہیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔

”موت منڈی میں اکیلی موت کا قصّہ“ دکھ اور شدت احساس کی اس انتہا پر بیٹھ کر لکھی گئی کہانی ہے جہاں دکھ ، طنز کی تلخی میں ڈھل جاتا ہے۔ اکیسویں صدی کے کورے کاغذ پر ایک اکیلی موت کا قصہ کیا سجے گا جب کہ ”تھوک میں مرتے انسانوں کے خون کی باڑھ “ ابھی منتظر ہے کہ اس کی سرخی جمے۔ مرگ انبوہ کے جشن میں ایک اکیلی موت کا نوحہ کیا معنی رکھتا ہے؟ اجتماعی سانحوں میں فرد کی ذات کیسے بے توقیر ہو جاتی ہے، حمید شاہد نے اپنے عہد میں آنے والی ہر قیامت کی چاپ کو اپنے دل پر دھمکتے محسوس کیا ہے۔

ڈاکٹر نجیبہ عارف


توصیف تبسم
توصیف تبسم

ایک نئی قسم کی حقیقت نگاری کی راہ 

محمد حمید شاہد کے افسانوں کو پڑھتے ہوئے ‘ دنیا سے متعلق ہمارے سابق یا بھولے بسرے علم کا احیا ہی نہیں ہوتا‘ بلکہ ہمیں باہر کی دنیا کا نیا ادراک حاصل ہوتا ہے‘ یعنی ہم محض بازیافت ہی نہیں کرتے بلکہ نئی یافت سے ہم کنار بھی ہوتے ہیں۔ بقول مبین مرزا فکشن محمد حمید شاہد کا مشغلہ نہیں بلکہ زندگی اور موت کا مسئلہ ہے۔ فن سے سچی اور کھری وابستگی نے افسانہ نگار کو ایک ایسی راہ پر گامزن کر دیا ہے جہاں خارجی حقیقت نگاری اور باطنی صداقت پسندی مل کر ایک ہو گئی ہیں ۔ انسانی زندگی کاا لمیہ ہویا سیاسی وسماجی حالات کا دھارا‘ محبت کے کومل جذبے ہوں یا رشتوں کی مہک‘ ریاستی گروہی جبر ہو یا عالمی دہشت گردی یا پھر تہذیبی حوالوں کو نگلتی بازاری ثقافت ‘محمد حمید شاہد کا قلم یکساں روانی اور تخلیقی وقار کے ساتھ سب کو سمیٹتا چلا جاتا ہے۔
فن کار کا ایک منصب یہ بھی ہے کہ وہ اپنی تخلیق کو انسانی فطرت سے ہم آہنگ کرے۔ محمدحمیدشاہد نے اپنے بیانیے کو ایک سے زائد سطحوں پر یوں متحرک کرلیا ہے کہ وہ مطلق طور پر انسانی آہنگ میں ڈھل گیا ہے۔ اسی لیے تو احمد ندیم قاسمی کو کہنا پڑا کہ” محمد حمید شاہد کے افسانوں کا ایک ایک کردار ‘ایک ایک لاکھ انسانوں کی نمائندگی کرتا ہے۔“ خود شعوریت سے جہاں افسانہ نگار نے متن در متن یعنی  فریم نیریٹو کی صورت گری کی ہے وہاں انہوں نے اپنے افسانوں کو ایک نئی قسم کی حقیقت نگاری کی راہ بھی سجھا دی ہے ۔ محمد حمید شاہد کے ہاں نوحقیقت پسندی کے حوالے سے عمدہ مثال بن جانے والے افسانوں میں” برف کا گھونسلا“ ” برشور“ ” لوتھتکلے کا گھاﺅ“ ” ملبا سانس لیتا ہے“ ” موت منڈی میں اکیلی موت کا قصہ“ ”جنم جہنم“”چٹاکا شاخ اشتہا کا“ ” آدمی کا بکھراﺅ“ ”پارہ دوز“ اور ” مرگ زار“ جیسے افسانے شامل ہیں۔ واضح رہے کہ بقول ناصر عباس نیر، محمد حمید شاہد کی نو حقیقت پسندی دراصل زندگی پر غیر مشروط مگر کلی نظر ڈالنے سے عبارت ہے اور یہ اس توازن کو بحال کرتی ہے جسے جدیدیت پسندوں کی نافہمی اور ترقی پسندوں کی انتہا پسندانہ روشوں نے پامال کر دیا تھا۔ محمد حمید شاہد کےافسانے سورگ میں سور“”گانٹھ “ اور مرگ زار“  پاکستان اور اردو ادب کے شاہکار تسلیم کیے جائیں گے

ڈاکٹر توصیف تبسم


،،


 

محمد حمید شاہد کے افسانے

Click to read now

 

About Urdufiction

یہ بھی دیکھیں

برف کا گھونسلا|محمد حمید شاہد

وہ غُصے میں جلی بُھنی بیٹھی تھی۔ اِدھر اُس نے چٹخنی کھولی‘ میں نے گھر …

32 comments

  1. Pingback: » مرگ زارM. Hameed Shahid

  2. Pingback: » گانٹھ|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  3. Pingback: » منجھلی|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  4. Pingback: » ہار،جیت|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  5. Pingback: » آدمی کا بکھراﺅ|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  6. Pingback: » برف کا گھونسلا|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  7. Pingback: » سورگ میں سور|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  8. Pingback: » مَرگ زار|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  9. Pingback: » لوتھ|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  10. Pingback: » موت کا بوسہ|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  11. Pingback: » جنم جہنم-1|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  12. Pingback: » جنم جہنم-3|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  13. Pingback: » ڈاکٹر توصیف تبسم|اثباتM. Hameed Shahid

  14. Pingback: » مراجعت کا عذاب|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  15. Pingback: » آئنے سے جھانکتی لکیریں|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  16. Pingback: » تماش بین|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  17. Pingback: » نئی الیکٹرا|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  18. Pingback: » رُکی ہوئی زندگی|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  19. Pingback: » وَاپسی|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  20. Pingback: » گرفت|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  21. Pingback: » تکلے کا گھاﺅ|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  22. Pingback: » پارِینہ لمحے کا نزول|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  23. Pingback: » ناہنجار|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  24. Pingback: » آٹھوں گانٹھ کمیت|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  25. Pingback: » کہانی اور کرچیاں|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  26. Pingback: » آخری صفحہ کی تحریر|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  27. Pingback: » سجدہ سہو|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  28. Pingback: » پارو|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  29. Pingback: » مَلبا سانس لیتا ہے|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  30. Pingback: » کتابُ الاموات سے میزانِ عدل کاباب|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  31. Pingback: » بھُرکس کہانیوں کا اندوختہ آدمی|محمد حمید شاہدM. Hameed Shahid

  32. Pingback: برف کا گھونسلا|محمد حمید شاہد – M. Hameed Shahid

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *